مزار پر دھمال

۔1 احادیث کے مطابق قبر ایک بالشت (ایک گِٹھ) کچی ہونی چاہئے۔ البتہ اس سوال کا با حوالہ جواب کوئی صاحب علم دے کہ کس دور میں کس بادشاہ یا خلیفہ نے کن علماء کے کہنے یا اپنی مرضی سے جنت البقیع اور جنت المعلی میں قبے،گنبد یا مزار وغیرہ بنائے؟ اہلسنت علماء کے دلائل کا ہمیں علم ہے کہ قبے بنانے جائز ہوں گے مگر یہ بھی تعلیم دیں کہ قبے، تعویذ، گنبد اگر نہ بنائے جائیں تب بھی جائز ہے ورنہ یہ ایک کاروبار بن کر اہلسنت کی تعلیمات کو برباد کر رہا ہے۔

۔ 2 ہمارا خیال ہے کہ یہ قبروں پر تعویذات، قبے، گنبد وغیرہ کی ابتدارافضیوں نے محمد بن طاہر رافضی کے مکہ مدینہ کے دو سو سالہ دور(260۔ 454ھجری) میں کی ہے،اسی دور میں تاریخ بدلی گئی، ریکارڈ جلائے گئے اور ہمیں تاریخ اسلام کے مصنفین ابو مخنف وغیرہ نے اہلبیت اور صحابہ کرام کے درمیان جھوٹے واقعات بیان کر کے بے بنیاد مذہب رافضی (اہلتشیع) کو پروموٹ کیا ہے اور اس تاریخ سے دھوکہ بابا اسحاق اور مودودی صاحب نے بھی کھایا۔اہلسنت کب چچا ابو طالب کا مزار بنا سکتے تھے جبکہ ان کا ایمان لانا ثابت ہی نہیں جیسے پوسٹ پر لگی تصویر سے مزار ثابت ہے۔ اسلئے 8 شوال کو اہلتشیع حضرات یوم انہدام (بلڈوز) جنت البقیع مناتے ہیں

۔3۔ 1924میں سعودی عرب کی حکومت کے ساتھ جناب محمد بن عبدالوہاب صاحب کے ماننے والے علماء آئے اور انہوں نے ساری دنیا سے آئی حنفی، شافعی، مالکی، حنبلی اہلسنت عوام کے چار مصلے (مقام)جہاں چار امام کعبہ کے پیچھے نماز ادا کرتے تھے، اُس کے نقشے تک جلا دئے اور علمی نقصان بھی کیا، اسلئے سو سالوں میں عوام اُن چار مصلوں کو بھول گئی۔ اسی طرح جناب محمد بن عبدالوہاب صاحب نے جنت البقیع، جنت معلی کے سارے گنبد، قبے وغیرہ ڈھا دئے۔ قبر ایک بالشت ہونی چاہئے مگر کیا یہ بھی خلاف سنت نہیں کہ کوئی بھی قبراس وقت سر سے لے کر پاؤں تک ایک بالشت نہیں ہے۔

۔ 4 جناب محمد بن عبدالوہاب صاحب کو خارجی اسلئے کہا گیا کہ انہوں نے 625سالہ محققین، مفسرین، محدثین، مفتیان عظام کو بدعتی و مشرک کہا۔ اسلئے ہر وہ عالم اہلسنت سے خارج ہو گا جو چار مصلے والوں کے متفقہ عقائد پر نہیں ہو گا کیونکہ پھر وہ نسل در نسل حضورﷺ سے متصل نہیں رہتا چاہے وہ بابا اسحاق، مودودی صاحب، طارق جمیل صاحب، مرزا انجینئر، غامدی صاحب، ڈاکٹر ذاکر نائک یا اہلحدیث جماعت ہو۔

۔5 دیوبندی علماء یہ بتا دیں کہ1924سے پہلے مزارات، قبے گنبد وغیرہ یا تصوف کی کتابیں سب بریلوی حضرات نے لکھیں یا دیوبندی بھی اُس وقت زندہ تھے کیونکہ جناب احمد رضا خاں صاحب1921میں وفات پا گئے جب کہ جناب اشرف علی تھانوی صاحب 1943تک زندہ رہے۔ دیوبندی اور بریلوی علماء کو 21رمضان 2020کو حضرت علی رضی اللہ عنہ کی شہادت پر رافضیوں کا حکومتی لیول پر رسائی کا اندازہ تو ہو گیا ہو گا۔دیوبندی اور بریلوی علماء کہہ رہے ہیں کہ اہلسنت کو کارنر کیا جا رہا ہے۔ بالکل کیا جا رہا ہے کیونکہ سعودی عرب نے اہلسنت بریلوی کو کارنر کیا ہے اور ایران نے دیوبندی اہلسنت کو کارنر کرنا ہے۔ سعودی عرب کے ساتھ ملیں تو خارجی بنتے ہیں اور ایران کے ساتھ ملیں تو رافضی بنتے ہیں۔چار مصلے والے اہلسنت علماء کرام (حنفی، شافعی،مالکی، حنبلی) کے عقائد چھوڑ کر گمراہ علماء سوء نے عوام کو کیا ہے۔

۔6 ہم پاکستان میں قبر کو ایک بالشت رکھنا چاہتے ہیں کیا پاکستان میں ایسا کوئی ادارہ ہے جس میں دیوبندی بریلوی اہلحدیث حضرات مزارات کو ڈھانے اور شرعی طور پر کچی قبر بنانے کی کوئی شکایت درج کرا سکیں تاکہ قانونی طور پر حل نکالا جائے۔ البتہ یہ بھی معلوم ہے کہ اگر ہو گا بھی تو ہماری کس نے سننی ہے وہ سعودیہ اور ایران کی سنیں گے۔ دیوبندی اور اہلحدیث کہتے ہیں کہ مزارات کے خلاف اہلسنت کب بولتے ہیں، چلو اس پیج پر اہلسنت کا موقف بیان کیا ہے سارے دیوبندی اور اہلحدیث اپنے پیج پر اس پوسٹ کو شئیر کریں ورنہ عوام کو گمراہ کرنے کے جرم میں جہنم جانے کا انتظار کریں۔

اتحاد امت: پاکستان میں عوام مذہبی انتشار دور کر سکتی ہے اگر بریلوی اور دیوبندی جماعتوں کو ”مافیا“ سے آزاد کروا لیں۔ دونوں جماعتیں 625سالہ ملک حجاز کے خانہ کعبہ میں چار مصلے والی حنفی، شافعی، مالکی، حنبلی اہلسنت علماء کرام کے متفقہ عقائد پر ہے۔ اسلئے دیوبندی اور بریلوی علماء اپنی اپنی عوام کے ساتھ سب کو بتا دیں کہ وہ چار مصلے والے ہیں جن کو سعودی عرب کے وہابی علماء نے بدعتی و مشرک کہا۔ دونوں جماعتوں کا اصولی اختلاف چار کفریہ عبارتوں پر ہے۔دونوں جماعتیں بتا دیں کہ اذان سے پہلے درود، نماز کے بعد کلمہ، جمعہ کے بعد سلام، قل و چہلم نہ کرنے والے کو جو جاہل وہابی کہتا ہے وہ اہلسنت نہیں۔

اہلتشیع: اہلتشیع پر علمی کام اہلسنت بریلوی عالم جناب علامہ محمد علی صاحب، بلال گنج لاہور والوں نے عقیدہ جعفر، فقہ جعفر اور تحفہ جعفری کتابیں لکھ کر کیا ہےاور عملی طور پر دیوبندی نے کھلم کھلا ان کے عقائد کو عوام کے سامنے پیش کیا۔ اہلسنت کبھی اہلتشیع نہیں ہو سکتا کیونکہ اہلتشیع بے بنیاد مذہب ہے۔ اہلحدیث سارے ہیں البتہ اہلحدیث کی گمراہی تقلید کو بدعت و شرک کہنا ہے، اپنے مجتہد کا نام نہ بتانا ہے، اپنے مدارس کے فتوی کی اندھی دھند تقلید کرنا ہے۔ اسلئے اس تقیہ بازی سے توبہ کریں اور تقلید کو بدعت و شرک کہنا بند کریں۔قرآن و احادیث کے مزید حوالے یا بحث کمنٹ سیکشن میں کر سکتے ہیں۔

دُعا: یا اللہ پاکستان میں دیوبندی، بریلوی اور اہلحدیث کومُلک حجاز کے چار مصلے والے اہلسنت علماء کرام (حنفی، شافعی، مالکی، حنبلی) کے متفقہ عقائد پر اکٹھا فرما کر امت کو متحد کر دے۔ روزانہ7.30 PM پر کسی نہ کسی مسئلے پر پوسٹ لگائی جاتی ہے۔ہر پوسٹ کاپی یا شئیر کرنے کی اجازت ہے اور جس مسلمان (ما انا علیہ و اصحابی) /سُنّی کو سمجھ آئے وہ yes کا کمنٹ کرے ورنہ سوال پوچھ سکتا ہے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here